منگل، 30 جون، 2020

ؐ میرا گاوں

             اس  گاوں  کے  منظر  باتیں کرتے  ھیں
              
  چڑیاں  پیڑ  اور پتھر  باتیں کرتے ھییں

سیمنٹ کی دیواریں چپ چپ رہتی ھیں 
مٹی کے  کچے  گھر باتینں کرتے  ھینں

ساون مین  جب  ندیاں  شور مچاتی ھینں
جھرنے  بھی خوش  ھو کر باتیں کرتے ھیں

بادل جب جھکتے ھین سبز پہاڑوں پر 

بے حد سندر سندر باتیں کرتے ھین 

یہ جو تم کو دکھتے ھین معصوم  گلاب 

تتلی سے چھپ چھپ کر باتیں ھیں 

ہونٹون پے گو رھتے ھیں چپ کے صحرا 

آنکھون بیچ  سمندر باتین کرتے ھین 

اپنی  تنھائ کی محفل میں ھم  بھی
بیلی  ان سے اکثر  باتیں کرتے ھیں


11 تبصرے:

  1. Thanks for sharing the article I always appreciate your topic
    Food Net

    جواب دیںحذف کریں
  2. Nice
    https://susankanewriter.blogspot.com/2019/04/letters-for-lewis.html?showComment=1599206425641#c3795984250721388439

    جواب دیںحذف کریں
  3. This is a beautiful poem, Baili. The scenery of the village does indeed speak. My compliments.

    جواب دیںحذف کریں
  4. یہ تبصرہ مصنف کی طرف سے ہٹا دیا گیا ہے۔

    جواب دیںحذف کریں

  5. E eu gosto da voz do mar
    Escuto o seu marulhar
    Como quem ouve e se cala.
    .
    Parabéns pelo belo poema! Abraço cordial. Laerte.
    Sim a natureza fala

    جواب دیںحذف کریں

ؐ میرا گاوں

              اس   گ اوں  کے  منظر  باتیں کرتے  ھیں                  چڑیاں  پیڑ  اور پتھر  باتیں کرتے ھییں سیمنٹ کی دیواریں چپ چپ رہتی ھیں  ...